لارڈز,گرائونڈ,مسلمان,کرکٹر,شراب

لارڈز کے تاریخی گرائونڈ میں مسلمان کرکٹر کو شراب میں نہلا دیا گیا،بریکنگ نیوز

عمران عثمانی

ایسیکس کا ئونٹی کے مسلمان کھلاڑی کوشراب میں نہلا دیا گیا ہے،جس کے بعد انگلینڈ کے کرکٹ حلقوں میں پھر وہی بحث چھڑی ہے کہ کائونٹیز اقدار کا خیال نہیں کرتیں اور کسی نہ کسی انداز میں نسل پرستی کاشکار رہتی ہیں۔مسلمان کھلاڑی لارڈز کے تاریخی میدان میں اپنے ساتھ ہونے والی حرکت پر ششدر رہ گیاہے،کائونٹی حکام نے واقعہ پر افسوس ظاہر کرتے ہوئے صرف اتنا کہا ہے کہ ہمیں اپنے کھلاڑیوں کے اقدار کو مزید بہتر کرنے کی ضرورت ہے۔
لارڈز کرکٹ گرائونڈ میں باب ولس ٹرافی کے فائنل میں برتری کی بنیاد پر چیمپئن قرار دی جانے والی ایسیکس ٹیم نے بالکونی میں جشن منایا ،اس دوران ایک کرکٹر نے ساتھی مسلمان کرکٹر کو شراب میں نہلادیا،پوری بوتل سر پرانڈیلے جانے کے بعد متاثرہ کرکٹرفیروز خوشی حیرت کا شکار دکھائی دیئے ہیں۔
21 سالہ بلے باز فیروز خوشی نے ٹورنامنٹ کے ابتدائی مراحل میں متعددمیچ کھیلے اور اچھی کارکردگی پیش کی تھی۔تصویر واضح ہونے اور رد عمل پر کائونٹی نے پیر کی شام اپنے بیان میں کہا ہے کہ کرکلب اس سلسلہ میں تعلیم کا سلسلہ جاری رکھے گا لیکن ثقافتی اختلافات کے بارے میںکھلاڑیوں کو زیادہ آگاہ کرنے کے لئے مزید کام کی ضرورت ہے۔
نیشنل کرکٹ لیگ کے ساجد پٹیل کہتے ہیں کہ یہ مسئلہ جہالت کا ہے لیکن کسی نے بھی کرکٹرز کی تعلیم یا اقدار کو بتانے کے لئےکام نہیں کیا ہے،اس لئے یہ سلسلہ آئندہ بھی جاری رہے گا،میں پورے سسٹم کو مورد الزام ٹھہراتا ہوں، ٹیم منیجر اور سینئر کھلاڑیوں کو قصوروارکہتا ہوں جنہوں نے اس پریشانی کا اندازہ نہیں لگایا ۔ ہم نے انگلینڈ کی ٹیم کو اپنی تقریبات کا انتظام اس انداز سے کرتے دیکھا ہے کہ مسلمان کھلاڑیوں کو بھی شامل کیا جاسکے.

اپنا تبصرہ بھیجیں